پولیس نے مارکھم کے علاقے میں حادثے کے بعد فرار ہونے والی گاڑی کی ویڈیو ریلیز کر دی
پیل ریجن میں جعلی نوٹوں کی گردش کا انکشاف، پولیس کا شہریوں کو ہوشیار رہنے کا انتباہ
دو بچوں کی ماں کانشے کی حالت میں گاڑی چلانے اورایکسیڈنٹ کرنے پر چالان ، اسکار بورو پولیس
November 20, 2017 قومی آواز ۔ ٹورنٹو: پولیس آفیسر کی نشے کی زیادتی سے ہلاکت کے بعد پولیس اہلکاروں کی چیکنگ کا معاملہ زور پکڑ گیا ٹورنٹو پولیس کے ایک اعلامیے کے مطابق ایک پولیس آفیسر کے نشے کی زیادتی کی وجہ سے ہلاکت کے بعد شہری حلقوں میں یہ مطالبہ زور پکڑ رہا ہے کہ پولیس کے اہلکاروں وقتاً فوقتاً چیکنگ کی جائے تاکہ ان کی صحت اور نشے کی کیفیت کی بر وقت جانچ کی جا سکے ۔ یہ معاملہ اس وقت سامنے آیا جب ٹورنٹو پولیس کا ایک آفیسر مائیکل تھامسن نشے کی زیادتی کی وجہ سے اسپتال لایا گیا جہاں وہ ہلاک ہو گیا۔ مذکورہ پولیس آفیسر خود نشے کا تدارک کرنے والی فورس کا رکن تھا ۔اس واقعے کے بعد ٹورنٹو پولیس کی اہلیت اور کارکردگی پر سوال اٹھنے لگے ہیں۔ حکام کا کہنا ہے کہ اس سلسلے میں جلد ہی اقدامات متوقع ہیں جس سے صورتحال بہت ہو جائے گی۔ 
مسی ساگا میں خاتون پر چاقو سے حملہ ، خاتون حملہ آور کو پولیس نے گرفتار کر لیا
اسپیڈینا ریلوے اسٹیشن پر مسافروں پر مرچ اسپرے سے حملہ ، دو مسافر زخمی حملہ آور فرار
وزیر خزانہ اسحاق ڈار کا استعفیٰ دینے سے انکار
کوئٹہ: پاک - چین اقتصادی راہداری کے حوالے سے مشترکہ ایئرشو
اسلام آباد دھرنا ختم نہ کرانے پر انتظامیہ کو توہین عدالت کا شوکاز نوٹس جاری
زمبابوین صدر کا قوم سے خطاب، استعفے کا ذکر تک نہ کیا

الوداع جنید، مجھے تم جیسا نہیں بننا

January 24, 2017

قومی آواز ۔انعام رانا ۔

جنید جمشید سانحہ فرقہ واریت نبوی اخلاق

مائیں اولاد سے مایوس نہیں ہوتیں اور نا کبھی انکی خیر کی تمنا بند کرتی ہیں۔ سالوں پہلے جب میں تشکیک کا شکار تھا، مناظروں کا شوقین تھا، علم کا زعم دوسروں کو پٹخنیاں دینے پر مجبور کرتا تھا، جب ہر مباحثے کے بعد اپنے دلائل پہ نازاں تضحیکی مسکراہٹ سے دوسرے کو ایک منافقانہ ہمدردی سے کہا کرتا تھا “یار کُج پڑھ وی لیا کرو”، جب مجھ سے پیار کرنے والے مجھے دعا دیتے تھے کہ اللہ کرے تو مسلمان ہو جائے؛ تو ایک دن میری ماں نے کہا مجھے یقین ہے ایک دن تو نے جنید جمشید کی طرح بن جانا ہے اور میں ہنس پڑا۔
ہمارے برصغیر میں رہنما ہمیشہ حسین کامیاب ہوتا ہے۔ خواہ وہ قائد اعظم ہوں یا نہرو، بے نظیر ہو یا اندرا، بھٹو ہو یا عمران، ہم مثال ہمیشہ حسین کو بناتے ہیں۔ اسی طرح ایک حسین شہزادہ جب تبلیغ کی طرف پلٹا اور کایا ہی پلٹ گئی تو بہت سوں کیلیے مثال بن گیا۔ شاید اسی برصغیر کی نفسیات کے زیر اثر میری ماں کو لگتا تھا کہ میں بھی ایک دن جنید کی طرح پلٹ جاوں گا جو داڑھی رکھ کر بھی حسین لگتا تھا اور میں ہنس کر کہتا تھا کہ میں نہیں بنتا جنید۔
جنید میری اور مجھ جیسی پوری نسل کا “آئی کون” تھا۔ حسین، سریلا، جس کا دل دل پاکستان ہم نے بچپن میں گایا، جس کی جامنی ہونٹوں والی محبوبہ گنگناتے ہم نے نوجوانی کا اولین لمس محسوس کیا۔ مگر پھر اچانک وہ بھرے سٹیج سے اتر گیا۔ مجھے دکھ ہوا۔ اب اس کیلیے موسیقی حرام تھی جو مجھے پسند تھی۔ اسکے نظریات، ٹخنوں سے اوپر شلوار، عورت کے متعلق خیالات، مونچیں کاٹ کر رکھی داڑھی ان سب پر ہی مجھے اعتراض تھا؛ اچھا خاصا انسان دیکھو کیا بن گیا اس مولوی طارق جمیل کے پیچھے لگ کر۔ ہاں مگر ایک چیز مجھے پسند تھی، اسکا نرم لہجہ اور مسکراتا چہرہ۔ میں اپنی نوجوانی کے جوار بھاٹے سے نکلا، حالات کی پٹخنیاں کھاتا ہوا تشکیک سے ایمان کی طرف لوٹا، تب بھی مجھے اسکی بہت سی باتوں سے اختلاف تھا، آج بھی ہے۔ مگر پھر وہی بات، اسکا حلم اور اخلاق ویسا ہی تھا جیسا سیرت کی کتب میں لکھا تھا اور جو ہر مسلمان کو اپنانے کی تلقین تھی۔
اسی love-hate relationship میں میں اسے فالو کرتا رہا۔ پھر وہ ان ہی کے ہتھے چڑھنے لگا جنکی محبت میں گرفتار تھا۔ جو مذہبی حلیئے بنا کر وہ تبلیغ کر رھا تھا، اسی طرح کے حلیئے والے اس کی پکڑ کرنے لگے، گالیاں بکی گئیں، فتوے لگے، اور جب ائرپورٹ پر گالی اور تھپڑ سے نوازا گیا تو میں نے دل میں کہا “ہور چوپو”۔ مگر اسی دل میں جیسے کچھ ٹوٹ گیا۔ جو چمکتی روشینیاں چھوڑ کر نور کی تلاش میں نکلا تھا، اسکو شب ظلمت کا سامنا تھا، عامر لیاقت جیسے ابن الوقت کی زبان سانپ بن کر ڈس رہی تھی اور جو شاید اسکے کنسرٹ لائن بنا کر سنتے وہ اس دن اسے گالی دے کر تھپڑ مار رہے تھے۔ کیا لوٹنے والوں کو یوں سینے سے لگاتے ہو؟ مگر وہ پھر وہیں تھا، مسکراتا ہوا، نبوی اخلاق کا نمونہ بن کر معاف کرتا ہوا؛ آہ اس شخص کو کیا ہو گیا۔
آج وہ جو اللہ کے راستے میں نکلا، اللہ سے جا ملا۔ مجھے اسکے خیالات، اسکے نظریات سے اختلاف ہو سکتا ہے مگر وہ انسان تھا، میرا مسلمان بھائی تھا، میرے آقا(ص) کے اخلاق کا پیروکار تھا؛ میں اسکی مغفرت اور بلند درجات کیلیے دعاگو ہوں۔ آمین۔ مجھے یقین ہے کہ خدا نے اسے بخش دیا، مگر خدا کے ٹھیکیدار تو ابھی بھی عدالت لگائے بیٹھے ہیں۔ میرے “لبرل” دوست اگر اس پہ طنز کریں تو دکھ ہے کہ “انسانی قدروں” کے تقدس کا سبق کیا ہوا؟ مگر یہ جو ابھی بھی اپنے مسلک اور فرقہ واریت سے لٹھڑے ہاتھوں سے اسکی لاش نوچ رہے ہیں، جو مذہب کا نام لے کر اسکی تحقیر کر رہے ہیں، ان کو یہ اخلاق کس اسلام نے سکھائے۔ ہمارے نبی (ص) تو ابن ابی کا جنازہ کوئی سخت بات کہے بغیر پڑھا دیں، اور انکے پیروکار انکے ایک عاشق کی موت کا جشن منائیں؟
الوداع جنید، جنتوں میں گھر پاو۔ کاش تم بس ایک دیندار مسلمان بن جاتے مگر ان ناعاقبت اندیش گروہوں کا حصہ نا بنتے جو ایک دوسرے کی لاشوں کو کھا کر پلتے ہیں۔ خوف آتا ہے کہ مسلمان بن کر کن کا ساتھی بننا پڑتا ہے۔ کل میں ہنس کر کہتا تھا مگر آج رو کر کہتا ہوں، مجھے تم جیسا نہیں بننا۔

تعارف : انعام رانا کو خواب دیکھنے کی عادت اور مکالمہ انعام کے خواب کی تعبیر ہے