پولیس نے مارکھم کے علاقے میں حادثے کے بعد فرار ہونے والی گاڑی کی ویڈیو ریلیز کر دی
پیل ریجن میں جعلی نوٹوں کی گردش کا انکشاف، پولیس کا شہریوں کو ہوشیار رہنے کا انتباہ
دو بچوں کی ماں کانشے کی حالت میں گاڑی چلانے اورایکسیڈنٹ کرنے پر چالان ، اسکار بورو پولیس
November 20, 2017 قومی آواز ۔ ٹورنٹو: پولیس آفیسر کی نشے کی زیادتی سے ہلاکت کے بعد پولیس اہلکاروں کی چیکنگ کا معاملہ زور پکڑ گیا ٹورنٹو پولیس کے ایک اعلامیے کے مطابق ایک پولیس آفیسر کے نشے کی زیادتی کی وجہ سے ہلاکت کے بعد شہری حلقوں میں یہ مطالبہ زور پکڑ رہا ہے کہ پولیس کے اہلکاروں وقتاً فوقتاً چیکنگ کی جائے تاکہ ان کی صحت اور نشے کی کیفیت کی بر وقت جانچ کی جا سکے ۔ یہ معاملہ اس وقت سامنے آیا جب ٹورنٹو پولیس کا ایک آفیسر مائیکل تھامسن نشے کی زیادتی کی وجہ سے اسپتال لایا گیا جہاں وہ ہلاک ہو گیا۔ مذکورہ پولیس آفیسر خود نشے کا تدارک کرنے والی فورس کا رکن تھا ۔اس واقعے کے بعد ٹورنٹو پولیس کی اہلیت اور کارکردگی پر سوال اٹھنے لگے ہیں۔ حکام کا کہنا ہے کہ اس سلسلے میں جلد ہی اقدامات متوقع ہیں جس سے صورتحال بہت ہو جائے گی۔ 
مسی ساگا میں خاتون پر چاقو سے حملہ ، خاتون حملہ آور کو پولیس نے گرفتار کر لیا
اسپیڈینا ریلوے اسٹیشن پر مسافروں پر مرچ اسپرے سے حملہ ، دو مسافر زخمی حملہ آور فرار
وزیر خزانہ اسحاق ڈار کا استعفیٰ دینے سے انکار
کوئٹہ: پاک - چین اقتصادی راہداری کے حوالے سے مشترکہ ایئرشو
اسلام آباد دھرنا ختم نہ کرانے پر انتظامیہ کو توہین عدالت کا شوکاز نوٹس جاری
زمبابوین صدر کا قوم سے خطاب، استعفے کا ذکر تک نہ کیا

ﺳﺰﺍﺋﮯ ﻣﻮﺕ ﮐﺎ ﻣﻨﺘﻈﺮ ﻗﯿﺪﯼ

موت کا منظر
قومی آواز
اس ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﻣَﯿﮟ ﺍﺑﮭﯽ ﭘﮭﺎﻧﺴﯽ ﮐﮯ ﻣﻨﺘﻈﺮ ﻗﯿﺪﯼ ﺳﮯ ﺁﺧﺮﯼ ﻣﻼﻗﺎﺕ
ﮐﺮﮐﮯ ﺁﯾﺎ ﮨﻮﮞ۔ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﺎﻧﻮﮞ ﮐﻮ ﮨﺎﺗﮫ ﻟﮕﺎﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﮩﺎ۔ ﺍﺱ ﺳﮯ
ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﯾﺪ ﮨﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﺮﺑﻨﺎﮎ ﻣﻨﻈﺮ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﻮ۔ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺖ ﮐﮯ
ﻧﺎﻃﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻋﺰﯾﺰ ﻭ ﺍﻗﺎﺭﺏ ﮐﯽ ﻣﻨﺖ ﮐﺮﮐﮯ ﺍﭘﻨﺎ ﻧﺎﻡ ﺁﺧﺮﯼ ﻣﻼﻗﺎﺗﯿﻮﮞ
ﮐﯽ ﻓﮩﺮﺳﺖ ﻣﯿﮟ ﮈﻟﻮﺍﯾﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺱ ﮐﺎ ﮐﮩﻨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻣَﯿﮟ ﻧﮯ ﺁﺝ ﺍﯾﮏ ﺯﻧﺪﮦ
ﻣﺮُﺩﮮ ﮐﺎ ﺁﺧﺮﯼ ﺩﯾﺪﺍﺭ ﮐﯿﺎ۔ ﺍﺱ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮐﺌﯽ ﻣﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺩﻭﺳﺘﻮﮞ،
ﻋﺰﯾﺰﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﺭﺷﺘﮧ ﺩﺍﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﻣﯿﺖ ﮐﺎ ﺁﺧﺮﯼ ﺩﯾﺪﺍﺭ ﺗﻮ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﻣﻮﻗﻊ
ﻣﻠﺘﺎ ﺭﮨﺎ، ﻟﯿﮑﻦ ﺳﺰﺍﺋﮯ ﻣﻮﺕ ﮐﮯ ﻣﻨﺘﻈﺮ ﻗﯿﺪﯼ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﯽ ﺯﻧﺪﮦ ﻻﺵ
ﮐﯽ ﺷﮑﻞ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ، ﺟﺲ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮯ ﭼﺎﺭﮔﯽ، ﺧﻮﻑ، ﻣﺎﯾﻮﺳﯽ
ﺍﻭﺭ ﺍﻟﺘﺠﺎ ﮐﮯ ﺗﺎﺛﺮﺍﺕ ﺑﯿﮏ ﻭﻗﺖ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺗﮭﮯ۔ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﮨﻢ
ﺳﻼﺧﻮﮞ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﺟﺎﻧﺐ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺗﮭﮯ، ﺍﺳﮯ ﺟﺐ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺟﺎﻧﺐ ﺳﮯ ﻻﯾﺎ
ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﭼﺎﻝ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﯾﻮﮞ ﻟﮕﺘﺎ ﺗﮭﺎ، ﺟﯿﺴﮯ ﺍﺳﮯ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻃﺮﻑ
ﻧﮩﯿﮟ ﭘﮭﺎﻧﺴﯽ ﮔﮭﺎﭦ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﻟﮯ ﺟﺎﯾﺎ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﻮ۔ ﺍﺱ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ
ﺟﺐ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻋﺰﯾﺰ ﻭ ﺍﻗﺎﺭﺏ ﺳﮯ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﮨﻮﺗﯽ ﺗﮭﯽ ﺗﻮ ﺧﻮﺷﯽ ﺧﻮﺷﯽ
ﭼﻞ ﮐﮯ ﺁﺗﺎ ﺗﮭﺎ، ﺍﺳﮯ ﻣﻠﻨﮯ ﮐﯽ ﺗﮍﭖ ﻧﮩﺎﻝ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﯽ ﺗﮭﯽ، ﻣﮕﺮ ﺁﺝ ﺍﺳﮯ
ﭼﻠﻨﺎ ﺑﮭﯽ ﺩﺷﻮﺍﺭ ﮨﻮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﯾﮧ ﭼﮩﺮﮮ، ﯾﮧ ﻣﻨﻈﺮ، ﯾﮧ ﺻﺒﺤﯿﮟ، ﯾﮧ
ﺷﺎﻣﯿﮟ ﺳﺐ ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮐﮭﻮ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔
ﻭﮦ ﺟﺐ ﺁﯾﺎ ﺗﻮ ﺍﯾﺴﮯ ﺁﮦ ﻭ ﺑﮑﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﮔﺌﯽ، ﺟﯿﺴﮯ ﺟﻨﺎﺯﮦ ﺍﭨﮭﻨﮯ ﭘﺮ
ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺟﻨﺎﺯﮮ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺍﭨﮭﺘﮯ ﺩﯾﮑﮫ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺱ
ﺳﮯ ﺑﮍﯼ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﮐﻮ ﺋﯽ ﺍﺫﯾﺖ ﮨﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﮑﺘﯽ ﮐﮧ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﺍﭘﻨﮯ
ﻣﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﺧﻮﺩ ﺷﺎﮨﺪ ﺑﻦ ﺟﺎﺋﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ، ﺑﭽﮯ، ﺑﮩﻨﯿﮟ، ﺑﮭﺎﺑﮭﯿﺎﮞ،
ﺑﮭﺎﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﻗﺮﯾﺒﯽ ﻋﺰﯾﺰ ﺩﮬﺎﮌﯾﮟ ﻣﺎﺭ ﮐﮯ ﺭﻭ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ، ﻣﮕﺮ ﺍﺱ ﮐﯽ
ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﺧﺸﮏ ﺗﮭﯿﮟ،ﺁﻧﺴﻮ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺳﺎﺗﮫ ﭼﮭﻮﺭ ﮔﺌﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﻭﮦ
ﭘﮭﭩﯽ ﭘﮭﭩﯽ ﺧﻮﻓﺰﺩﮦ ﻧﮕﺎﮨﻮﮞ ﺳﮯ ﺳﺐ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮫ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺑﮩﺖ ﺩﯾﺮ ﺑﻌﺪ
ﺍﺱ ﮐﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﺳﮯ ﺻﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﺟﻤﻠﮧ ﻧﮑﻼ ’’ ﻣﯿﺮﯼ ﻣﻐﻔﺮﺕ ﮐﯽ ﺩﻋﺎ ﮐﺮﻧﺎ،
ﻣﺪﻋﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﭘﺎﺅﮞ ﭘﮑﮍ ﻟﯿﻨﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﺨﺸﺶ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﻣﺠﮭﮯ
ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮ ﺩﯾﮟ ‘‘ ۔۔۔ﻭﮦ ﻣﺠﮭﮯ ﺟﺐ ﯾﮧ ﺳﺐ ﮐﭽﮫ ﺑﺘﺎ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﺗﻮ ﺧﻮﺩ
ﻣﯿﺮﮮ ﺍﻧﺪﺭ ﺍﯾﮏ ﮐﭙﮑﭙﯽ ﺳﯽ ﻃﺎﺭﯼ ﺗﮭﯽ۔ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﭽﮫ ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﺟﺰﯾﺎﺕ
ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺁﺧﺮﯼ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﮐﺎ ﻣﻨﻈﺮ ﮐﮭﯿﻨﭽﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﯾﻮﮞ ﻟﮕﺎ
ﺟﯿﺴﮯ ﻣَﯿﮟ ﺧﻮﺩ ﻭﮨﺎﮞ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﻮﮞ۔ ﻭﮦ ﺧﻮﺩ ﺍﯾﮏ ﺍﭼﮭﺎ ﻟﮑﮭﺎﺭﯼ ﮨﮯ،
ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﮩﺎ ﺍﺱ ﭘﺮ ﮐﭽﮫ ﻟﮑﮭﻮ ﺗﻮ ﻣﯿﺮﺍ ﺫﮐﺮ ﻧﮧ ﮐﺮﻧﺎ، ﮐﺴﯽ
ﻗﺎﺗﻞ ﮐﺎ ﺩﻭﺳﺖ ﮨﻮﻧﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﭼﮭﺎ ﺣﻮﺍﻟﮧ ﻧﮩﯿﮟ۔
ﺍﺱ ﻧﮯ ﺳﻨﭩﺮﻝ ﺟﯿﻞ ﻣﻠﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﭘﮭﺎﻧﺴﯽ ﭘﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻣﺠﺮﻡ ﺳﮯ ﺁﺧﺮﯼ
ﻣﻼﻗﺎﺕ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺳﻦ ﮐﺮ ﻣَﯿﮟ ﺳﻮﭺ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﺏ
ﭘﮭﺎﻧﺴﯿﻮﮞ ﮐﺎ ﺳﻠﺴﻠﮧ ﺳﯿﻼﺏ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺍﯾﺴﮯ ﮐﺮﺑﻨﺎﮎ
ﻣﻨﺎﻇﺮ ﺍﻭﺭ ﺩﺭﺩﻧﺎﮎ ﻣﻼﻗﺎﺗﯿﮟ ﺗﻮ ﺭﻭﺯﺍﻧﮧ ﮨﯽ ﮨﻮﮞ ﮔﯽ۔ ﮔﮭﺮ ﮔﮭﺮ ﺻﻒِ
ﻣﺎﺗﻢ ﺑﭽﮭﮯ ﮔﯽ۔ ﻣﻮﺕ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻣﻮﺕ ﮐﮯ ﻣﻨﺎﻇﺮ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﮐﻮ ﻣﻠﯿﮟ
ﮔﮯ۔ ﻧﺸﺎﻥ ﻋﺒﺮﺕ ﺑﻨﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻋﺒﺮﺕ ﮐﮯ ﻧﮧ ﻣﭩﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻧﺸﺎﻥ ﺍﭘﻨﮯ
ﻋﺰﯾﺰ ﻭ ﺍﻗﺎﺭﺏ، ﺩﻭﺳﺘﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﻣﺤﻠﮯ ﺩﺍﺭﻭﮞ ﭘﺮ ﭼﮭﻮﮌ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ۔ ﻣﻮﺕ
ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻣﻮﺕ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﮐﺎ ﻋﻠﻢ ﮨﻮ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺍﺫﯾﺖ ﮐﺲ ﻗﺪﺭ ﺑﮍﯼ ﺳﺰﺍ
ﮨﮯ، ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﻧﺪﺍﺯﮦ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﺎ، ﺳﻮﺍﺋﮯ ﻣﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﯾﺎ ﭘﮭﺮ
ﺍﺱ ﮐﮯ ﺭﺷﺘﮧ ﺩﺍﺭ، ﺟﻮ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺁﺧﺮﯼ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﮐﺮﮐﮯ ﺑﻮﺟﮭﻞ ﻗﺪﻣﻮﮞ ﮐﮯ
ﺳﺎﺗﮫ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﭘﺲ ﺁﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﮏ ﮔﮭﮍﯼ ﮔﻨﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﮯ
ﮨﯿﮟ۔ ﻭﻗﺖ ﮐﺲ ﻗﺪﺭ ﻗﯿﻤﺘﯽ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ، ﺟﺐ ﭘﮭﺎﻧﺴﯽ ﮐﯽ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﺭﮐﮫ
ﺩﯼ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﻣﻮﺕ ﮐﮯ ﻣﻨﺘﻈﺮ ﻗﯿﺪﯼ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻋﺰﯾﺰﻭﮞ ﮐﯽ ﺧﻮﺍﮨﺶ
ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﮐﺴﯽ ﻃﺮﺡ ﻭﻗﺖ ﺭﮎ ﺟﺎﺋﮯ، ﻭﮦ ﺩﻥ ﻧﮧ ﺁﺋﮯ ﺟﻮ ﻣﻮﺕ ﮐﺎ
ﻧﻘﺎﺭﮦ ﺑﺠﺎﻧﺎ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﮯ، ﻣﮕﺮ ﮨﻮﻧﯽ ﮐﻮ ﮐﻮﻥ ﺭﻭﮎ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔
ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﯽ ﺁﺧﺮﯼ ﺭﺍﺕ ﮐﯿﺴﮯ ﮔﺰﺭﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺑﻨﺪﮮ ﭘﺮ ﮐﯿﺎ
ﮔﺰﺭﺗﯽ ﮨﮯ، ﯾﮧ ﺗﻮ ﺑﺘﺎﻧﺎ ﻣﺸﮑﻞ ﮨﮯ، ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺑﺘﺎﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﺗﻮ ﻋﻠﯽ ﺍﻟﺼﺒﺢ
ﭘﮭﺎﻧﺴﯽ ﮐﮯ ﭘﮭﻨﺪﮮ ﭘﺮ ﺟﮭﻮﻝ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ، ﺍﻟﺒﺘﮧ ﻭﻗﺎﺭ ﻧﺬﯾﺮ ﺍﺏ ﺍﭘﻨﮯ
ﻋﺰﯾﺰﻭﮞ ﮐﻮ ﺿﺮﻭﺭ ﺑﺘﺎﺋﮯ ﮔﺎ، ﺍﺳﮯ 16 ﻣﺎﺭﭺ ﮐﯽ ﺻﺒﺢ ﺳﻨﭩﺮﻝ ﺟﯿﻞ ﻣﯿﮟ
ﭘﮭﺎﻧﺴﯽ ﭘﺮ ﻟﭩﮑﺎﯾﺎ ﺟﺎﻧﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺭﺍﺕ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﻣﻘﺘﻮﻝ ﮐﮯ ﻭﺭﺛﺎﺀ ﺳﮯ
ﺭﺍﺿﯽ ﻧﺎﻣﮧ ﮨﻮﮔﯿﺎ، ﺟﺲ ﮐﯽ ﺍﻃﻼﻉ ﺟﯿﻞ ﺍﻧﺘﻈﺎﻣﯿﮧ ﮐﻮ ﮨﻮﮔﺌﯽ، ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ
ﻧﮯ ﻭﻗﺎﺭﻧﺬﯾﺮ ﮐﻮ ﺍﺱ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﺘﺎﯾﺎ ۔ ﻭﮦ ﺳﺎﺭﯼ ﺭﺍﺕ ﺩﮬﺎﮌﯾﮟ
ﻣﺎﺭ ﮐﮯ ﺭﻭﺗﺎ ﺭﮨﺎ۔ ﯾﺎ ﺍﻟﻠﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﭽﺎ ﻟﮯ، ﯾﺎ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﻣﻮﻗﻊ ﺩﮮ
ﺩﮮ، ﺍﺏ ﻣَﯿﮟ ﮐﺒﮭﯽ ﺟﺮﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﻭﮞ ﮔﺎ۔ ﮨﺎﺋﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺑﭽﮯ، ﻣﯿﺮﯼ ﻣﺎﮞ،
ﻣﯿﺮﮮ ﺑﮩﻦ ﺑﮭﺎﺋﯽ، ﮨﺎﺋﮯ ﻣَﯿﮟ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺩﻭﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎﻧﺎ ﭼﺎﮨﺘﺎ، ﺍﮮ ﻣﻮﻻ
ﻣﺠﮭﮯ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮ ﺩﮮ، ﻣﺠﮭﮯ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﯽ ﻣﮩﻠﺖ ﺩﮮ ﺩﮮ، ﻣَﯿﮟ
ﭼﯿﺦ ﭼﯿﺦ ﮐﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﺘﺎﺅﮞ ﮔﺎ، ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﻗﺘﻞ ﻧﮧ ﮐﺮﻧﺎ، ﮐﺴﯽ ﮐﯽ
ﺟﺎﻥ ﻧﮧ ﻟﯿﻨﺎ، ﻗﺎﺗﻞ ﮐﺒﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﭽﺘﺎ، ﺟﺮﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﮐﺒﮭﯽ ﺳﮑﮭﯽ
ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﺘﺎ، ﺟﯿﻞ ﮐﮯ ﺫﺭﺍﺋﻊ ﺑﺘﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻭﻗﺎﺭ ﻧﺬﯾﺮ ﮐﯽ ﭼﯿﺦ ﻭ ﭘﮑﺎﺭ ﻧﮯ
ﺟﯿﻞ ﮐﮯ ﻣﺎﺣﻮﻝ ﮐﻮ ﻋﺒﺮﺕ ﺍﻧﮕﯿﺰ ﺑﻨﺎ ﺩﯾﺎ۔
ﺟﺐ ﺻﺒﺢ ﺍﺳﮯ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﯽ ﭘﮭﺎﻧﺴﯽ ﭨﻞ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ ﺗﻮ ﻭﮦ
ﺧﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ﺑﮯ ﮨﻮﺵ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ۔ ﺑﮍﯼ ﻣﺸﮑﻞ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﺱ
ﺑﺤﺎﻝ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﻮ ﺳﺠﺪﮮ ﻣﯿﮟ ﮔﺮ ﮔﯿﺎ۔ ﮨﺎﺋﮯ ﺍﮮ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺗﻮ ﺑﮭﯽ ﮐﺘﻨﯽ
ﻗﯿﻤﺘﯽ ﺷﮯ ﮨﮯ، ﻟﯿﮑﻦ ﻗﺎﺗﻠﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﻧﺪﺍﺯﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ، ﺟﺐ
ﯾﮧ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﭼﮭﯿﻦ ﺭﮨﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ، ﻟﯿﮑﻦ ﺟﺐ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﮐﯽ ﮔﺮﻓﺖ
ﻣﯿﮟ ﺁﮐﺮ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﭘﮭﺎﻧﺴﯽ ﮐﮯ ﭘﮭﻨﺪﮮ ﭘﺮ ﺟﮭﻮﻟﻨﮯ ﻟﮕﺘﯽ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺍﻥ
ﮐﯽ ﭼﯿﺨﯿﮟ ﻧﮑﻞ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﭘﮭﺎﻧﺴﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﻠﺴﻠﮯ ﺳﮯ ﯾﮧ ﺗﺎﺛﺮ ﺗﻮ
ﺩﻭﺭ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻋﺪﺍﻟﺘﯿﮟ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﯿﮟ، ﺟﻦ ﻣﺠﺮﻣﻮﮞ
ﮐﻮ ﭘﮭﺎﻧﺴﯿﺎﮞ ﺩﯼ ﺟﺎ ﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﭘﻨﺪﺭﮦ ﺑﯿﺲ ﺳﺎﻝ ﭘﮩﻠﮯ ﻗﺘﻞ
ﮐﺌﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﮐﺌﯽ ﮐﺌﯽ ﺳﺎﻝ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺳﺰﺍﺋﯿﮟ ﺳﻨﺎ ﺩﯼ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯿﮟ،
ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻥ ﭘﺮ ﻋﻤﻠﺪﺭﺁﻣﺪ ﮐﯽ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﻣﻠﮑﯽ ﻭ ﻋﺎﻟﻤﯽ ﺩﺑﺎﺅ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ
ﺣﮑﻮﻣﺘﯿﮟ ﺑﮯ ﺑﺴﯽ ﮐﺎ ﺍﻇﮩﺎﺭ ﮐﺮﺗﯽ ﺭﮨﯿﮟ۔ ﺳﺰﺍﺋﮯ ﻣﻮﺕ ﮐﻮ ﻋﻤﻼً ﻣﻌﻄﻞ
ﺭﮐﮭﺎ ﮔﯿﺎ، ﺟﺲ ﮐﮯ ﻧﺘﯿﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﺟﮩﺎﮞ ﺟﯿﻠﻮﮞ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺳﺰﺍﺋﮯ ﻣﻮﺕ
ﮐﮯ ﻗﯿﺪﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﺑﮍﮬﯽ ، ﻭﮨﯿﮟ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺳﻨﮕﯿﻦ ﺟﺮﺍﺋﻢ ﮐﯽ
ﺗﻌﺪﺍﺩ ﺑﮭﯽ ﺑﮍﮪ ﮔﺌﯽ۔( روزنامہ پاکستان سے اقتباس)


متعلقہ خبریں