پولیس نے مارکھم کے علاقے میں حادثے کے بعد فرار ہونے والی گاڑی کی ویڈیو ریلیز کر دی
پیل ریجن میں جعلی نوٹوں کی گردش کا انکشاف، پولیس کا شہریوں کو ہوشیار رہنے کا انتباہ
دو بچوں کی ماں کانشے کی حالت میں گاڑی چلانے اورایکسیڈنٹ کرنے پر چالان ، اسکار بورو پولیس
November 20, 2017 قومی آواز ۔ ٹورنٹو: پولیس آفیسر کی نشے کی زیادتی سے ہلاکت کے بعد پولیس اہلکاروں کی چیکنگ کا معاملہ زور پکڑ گیا ٹورنٹو پولیس کے ایک اعلامیے کے مطابق ایک پولیس آفیسر کے نشے کی زیادتی کی وجہ سے ہلاکت کے بعد شہری حلقوں میں یہ مطالبہ زور پکڑ رہا ہے کہ پولیس کے اہلکاروں وقتاً فوقتاً چیکنگ کی جائے تاکہ ان کی صحت اور نشے کی کیفیت کی بر وقت جانچ کی جا سکے ۔ یہ معاملہ اس وقت سامنے آیا جب ٹورنٹو پولیس کا ایک آفیسر مائیکل تھامسن نشے کی زیادتی کی وجہ سے اسپتال لایا گیا جہاں وہ ہلاک ہو گیا۔ مذکورہ پولیس آفیسر خود نشے کا تدارک کرنے والی فورس کا رکن تھا ۔اس واقعے کے بعد ٹورنٹو پولیس کی اہلیت اور کارکردگی پر سوال اٹھنے لگے ہیں۔ حکام کا کہنا ہے کہ اس سلسلے میں جلد ہی اقدامات متوقع ہیں جس سے صورتحال بہت ہو جائے گی۔ 
مسی ساگا میں خاتون پر چاقو سے حملہ ، خاتون حملہ آور کو پولیس نے گرفتار کر لیا
اسپیڈینا ریلوے اسٹیشن پر مسافروں پر مرچ اسپرے سے حملہ ، دو مسافر زخمی حملہ آور فرار
وزیر خزانہ اسحاق ڈار کا استعفیٰ دینے سے انکار
کوئٹہ: پاک - چین اقتصادی راہداری کے حوالے سے مشترکہ ایئرشو
اسلام آباد دھرنا ختم نہ کرانے پر انتظامیہ کو توہین عدالت کا شوکاز نوٹس جاری
زمبابوین صدر کا قوم سے خطاب، استعفے کا ذکر تک نہ کیا

تاج محل……محبت کی نشانی ایسے حقائق جن سے آپ نا آشنا ہوں

قومی آواز ۔ سیرو سیاحت ۔ بھارت کا نام سنیں تو سب سے پہلا خیال تاج محل کا آتا ہے اس کے مینار محراب اور ونیلایعنی مخروطی گنبد اپنے دیکھنے والے کو سحر انگیز کردیتے ہیں۔ ایک ایسا جادو بھرا منظر کہ سیاح دنیا ہی بھول جائیں۔ یہ عجوبہ اپنی بناوٹ میں کہیں بھی جھوٹ بولتا نظر نہیں آتا۔ اس کے چاروں طرف عشق رقصاںہے اور شاہ جہاں کی پر سرور روح لوگوں کے تاثرات دیکھ کر چار سو سال قبل تعمیر ہونے والے اس شاہکار پر فخر محسوس کر رہی ہے۔ یونیسکو نے تاج محل کو دنیا کا سب سے امیر ورثہ قراردیا ہے۔ اورنوبل آف انڈیا نے تو اسے ’’وقت کے گال پر لڑحکتا آنسو ‘‘ قراردیا ہے۔ تاج محل کے حوالے سے جدید تحقیق نے یہ ثابت کیا ہے کہ یہ دریائے جمنا میں تیرتا ہوا ایک پراسرار شاہکار تھا جو آہستہ آہستہ ڈوب رہا ہے۔ آج بھی تاج محل میں ایک شاندار مسجد ہے جس میں لوگ جمعہ کی نماز ادا کرنے دوردراز سے آتے ہیں اور یہاں تک پہنچنے کیلئے دریائے جمنا میں خصوصی کشتیاں بھی استعمال کرتے ہیں۔ اس بارے میں بہت کچھ لکھا اور کہا گیا۔ یہاں ہم چند حقائق پر بات کرتے ہیں جو محبت کی اس نشانی یعنی تاج محل سے منسوب ہیں۔ -1 مندر ہے کہ مقبرہ پروفیسر بلراج مدھوک، اوک اور کے نریندر جیسے خود ساختہ مورخ دنیا کی اس بے مثال عمارت کو شاہ جہاں اور ممتاز محل کی لافانی محبت کی نشانی نہیں سمجھتے بلکہ ان کا دعویٰ ہے کہ یہ عمارت راج پوت راجہ پرماردیو کا محل یا شیومندر تھاجس پر مغل شہنشاہ نے قبضہ کرکے اپنی ملکہ کے مقبرہ میں تبدیل کردیا۔ حالانکہ دنیا جانتی ہے کہ آگرہ میں دریائے جمنا کے کنارے نفیس سنگ مرمر سے تعمیر یہ روضہ اپنی محبت کی نشانی کے طور پر پانچویں مغل حکمراں شاہ جہاں نے تعمیر کرایا تھا، فارسی زبان میں ایسی تاریخوں کی کمی نہیں جس میں اس عمارت کی تفصیلی کیفیات اور بنانے والوں کے نام تک درج ہیں ۔ اس ضمن میں عدالت نے اس استدال کو مسترد کر دیا۔ ان کے علاوہ کسی اور کی یہ جرأت نہ ہوسکی کہ وہ تاج محل کوعشق و محبت پریوں جنوں کی کہانی قراردے۔ وہ کہتے ہیں کہ یہ کوئی سو پچاس سال کی کہانی نہیں، یہاں ہندوئوں کا مندر ہوتا تھا لیکن مغل دور میں کچھ مسلمان حکمرانوں نے اپنے عزیزوں کو یہاں دفنایا تھا اس لئے وہ دعویدار ہوگئے۔ ہمایوں اکبر اورصفدر جنگ کو بھی ایسی ہی عمارتوں میں دفن کیا گیا تھا۔ سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ اگر یہ شیوا کا مندر تھا تو اس کے دعویٰ میں اربوں ہندوئوں میں سے صرف چند لوگ ہی یہ آواز کیوں بلند کر رہے ہیں ۔ ہوسکتا ہے ان کی وجہ صرف سستی شہرت کا حصول ہو؟کیاوہ ایسا کر کے آنے والی نسلوں کو گمراہ کرنا چاہتے ہیں؟ -2 مردانہ برتری کی جھلک شاہ جہان کی موت کے بعد انہیں تاج محل میں ممتاز محل کے مقبرے میں ہی دفنایا گیا۔ یہ مقبرہ شاہ جہان کی محبت کی نشانی تھا جس کے پرشکوہ مینار آج بھی اس محبت کی یاد دلاتے ہیں۔ جو صدیاں پہلے برصغیر کی راجدھانی میں پنپی تھی۔ یہ کہانی رومیو جیولیٹ کی کہانی سے مختلف نہ تھی لیکن محبت کی اس داستان میں یہ نکتہ واضح طور پر سامنے آیا کہ یہاں بھی مردانہ برتری واضح ہے۔ اس محل کو جیومیٹری کے مسلمہ اصولوں کے مطابق تعمیر کروایا تھا لیکن محل میں واقع مقبروں کے مینار کا سائز مختلف ہے۔ شاہ جہان کے مقبرے کے مینار ممتاز محل کے مقبرے سے زیادہ بلند ہے۔ ہوسکتا ہے ایسا مردانہ برتری کو واضح کرنے کیلئے کیا گیا ہے۔ -3 ستونوں کے راز تاج محل کے چار مینار ہیں چاروں کے چاروں محل کی بنیاد سے اٹھائے گئے ہیں اورایسا زلزلے کے ممکنہ نقصانات سے بچنے کیلئے کیا گیا۔ اگر کبھی ایسا ہو بھی جائے تو صرف مینار ہی گرے گا اور باقی عمارت محفوظ رہے گی۔ یہ بات راز کی ہے کہ سیاح ہر طرف سے چاروں میناروں کو ایک ہی زاویے سے دیکھ سکتے ہیں اس وقت کے ماہر تعمیرات نے اس کی تعمیر میں فیثاغورث کا فارمولا اپنایا اور توازن کے تمام ریاضیاتی فارمولوں سے استفادہ کیا۔ -4 فرضی کہانیاں تاج محل کے ساتھ بھی بہت سی فرضی کہانیاں جڑی ہوئی ہیں۔ کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ شاہ جہاں دریائے جمنا پر ایک سیاہ تاج محل بھی بنوانا چاہتے تھے۔ شاہ جہان نے اپنی اس خواہش کا اظہار اپنے ماہرین تعمیرات سے کیا ہے کہ تاج محل کے مقابلے میںاس طرز کا سیاہ تاج محل بھی بنایا جائے لیکن یہ بیل منڈھے نہ چڑھ سکی اور اورنگزیب عالمگیر نے اس منصوبے کو آڑے ہاتھوں لیا اور اپنے باپ کو قید کرکے ہندوستانی عوام کے پیسے کو مزاروں مقبروں پر خرچ کرنے سے بچایا۔ آج بھی دریائے جمنا کے کنارے اس کالے محل کے نشان دیکھے جا سکتے ہیں۔ ایک اور کہانی بھی ہمیشہ گردش میں رہی کہ شاہ جہاں نے ان تمام معماروں کے ہاتھ قلم کروا دیئے جنہوں نے یہ شاہکار بنایا تھا۔ اس کی وجہ یہ بتائی جاتی رہی ہے کہ اس شاہکار کی نقل نہ کی جا سکے۔ -5 محل کے بدلتے رنگ ماہرین کے مطابق تاج محل کو عجوبہ بنانے کی ایک دلیل یہ ہے کہ سارا دن اس کے رنگ بدلتے رہتے ہیں اور بدلتے رنگوں کو یہ خاصیت خواتین کے موڈ کی عکاسی کرتی ہے خاص طورپر ملکہ ممتاز محل کے مزاج کی۔ صبح کے وقت اس محل کو گلابی شیڈ میں دیکھا جاسکتا ہے۔ جبکہ شام کو دودھیا سفید اور چاندنی رات کو سنہری دکھائی دیتا ہے۔ -6 کتنا سرمایہ خرچ ہوا اس شاہکار کی تعمیرپر 320 ملین بھارتی روپے خرچ ہوئے تھے۔ استاد احمد لاہور کی سربراہی میں 22ہزار مزدوروں نے دن رات اس کی تعمیر میں حصہ لیا۔ اس تعمیر کا سارا کریڈٹ استاد احمد لاہوری کوجاتا ہے۔ ان مزدوروں میں ہر طرح کے کاریگر بھی شامل تھے۔ ایک ہزار سے زائد ہاتھیوں نے بلڈنگ مٹیریل کو لانے لے جانے کا فریضہ سرانجام دیا۔ -7 سنگ مر مر اورمقبرہ تاج محل میں خالصتاً سفید پتھر یعنی سنگ مر مر استعمال ہواہے اس ضمن میں چین، عرب، افغانستان اور سری لنکا سے مختلف رنگوں کے قیمتی پتھر منگوائے گئے جن میں سے تقریباً 30 طرح کے پتھروں کو استعمال میں لایا گیا۔ ان پتھروں کی قدروقیمت کا اندازہ اس بات سے لگائیں کہ انگریزراج میں برصغیر سے بیش قیمت پتھروں کو اکھاڑ کر برطانیہ لے جایا گیا۔ تاج محل کی خوبصورتی کا منبع اس کا مقبرہ ہے۔ جسے پیاز کی شکل کا بنایا گیا۔ خوبصورت خطاطی میں اللہ پاک کے 99ناموں کو بھی کندہ کروایا گیا ہے۔ تاج محل کی مجموعی بلندی 171 میٹر ہے۔ -8 بائیس سال میں مکمل ہوا تاج محل جسے محلوںکا تاج کہا جاتا ہے اس کی تعمیر میں 22برس لگے یہ 1631ء میں شروع کیا گیا اور 1654ء میں پایہ تکمیل کو پہنچا۔ یہ شاندار عجوبہ اسلامی، ایرانی اور ہندوستانی فن تعمیر کا جیتا جاگتا ثبوت ہے۔ -9محبت کا خلاصہ ارجمندبانو بیگم بہت حسین و جمیل خاتون تھیں۔ شاہ جہاں ان کی محبت میںگرفتار ہوئے اورپھر شادی کرلی۔ وہ شاہ جہاں کی تیسری بیوی تھیں انہیں ممتاز محل کا خطاب دیا گیا جو کہ ہندی زبان سے لیا گیا جس کا مطلب یہ ہے کہ’’ محلوںکا جادو ‘‘ ۔ ممتاز محل اپنے 14 ویں بچے کو جنم دیتے ہوئے جان سے ہاتھ دھو بیٹھیں۔ یہ سانحہ شاہ جہاں کیلئے اس قدر شدید تھا کہ چند ہی مہینوں میں ان کے بال اور داڑھی سفیدہوگئی۔ -10 سیاحت دنیا کے سات عجائب میں سے ایک عجوبہ تاج محل ہے یہاں ایک ملین سے زائد سیاح یہاں کی سیر کو آتے ہیں ۔ 2001ء میں دو ملین سے زائد لوگوں نے یہاں کا رخ کیا تھا۔اسے آگرے کا برج بھی کہا جاتا ہے۔ تاج محل میں داخلے کی ٹکٹ کی شرح مقامی لوگوں کیلئے سستی ہے جبکہ غیر ملکیوں کو یہ سہولت نہیں ہے۔ اس سے کروڑوں کا زرمبادلہ کمایا جاتا ہے۔ ان تمام گاڑیوں پر یہاں پابندی عائد ہے جو آوارگی کا باعث ہوں۔ ٭٭٭


متعلقہ خبریں